حرام و حلال

مغرب کے پاس حلال اور حرام کا تصور نہیں ہے اور میری تھیوری ہے کہ جس وقت حرام رزق جسم میں داخل ہوتا ہے وہ انسانی genes کو متاثر کرتا ہے۔ رزق حرام سے ایک خاص قسم کی mutation ہوتی ہے جو خطرناک ادویات، شراب اور radiation سے بھی زیادہ مہلک ہے۔ رزق حرام سے جو genes تغیر پذیر ہوتے ہیں وہ لولے لنگڑے اور اندھے ہی نہیں ہوتے بلکہ ناامید بھی ہوتے ہیں۔ نسل انسانی سے یہ جب نسل در نسل ہم میں سفر کرتے ہیں تو ان genes کے اندر ایسی ذہنی پراگندگی پیدا ہوتی ہے جس کو ہم پاگل پن کہتے ہیں۔ یقین کرلو رزق حرام سے ہی ہماری آنے والی نسلوں کو پاگل پن وراثت میں ملتا ہے۔ اور جن قوموں میں من حیث القوم رزق حرام کھانے کا لپکا پڑ جاتا ہے، وہ من حیث القوم دیوانی ہونے لگتی ہیں۔

بانو قدسیہ کے ناول، راجہ گدھ سے اقتباس

بشکریہ: پارس صدیقی
---
Maghrib Kay Paas Halal aur Haraam Ka Tasawar Nahi Hai aur meri theory hay kay jis waqt haram rizq jisam mein dakhil hota hai wo insani genes ko mutasir karta hai. Rizq Haram say aik Khaas Qisam ki mutation hoti hai jo Khatarnak adwii'aat, shara'b, aur radiation say bhi ziaada moh'lak hai. rizq - e - haram say jo genes tagh'eear pazeer hotay hain wo lo'lay langraay aur andhay hee nahi hotay balkay na'umeed bhi hotay hain. nasl - e - insani say ye jab nasal dar nasal ham mein safar kartay hain to an genes kay ander aisi zehni par'agandgi paida hoti hay jis ko hum pagal pan kehtay hain. Yaqeen kar lo, rizq - e - haram say he hamari Aanay wali naslo'un ko pagal pan warasat mein milta hai. Aur jin qau'moun mein man hais al qaum rizq - e - haram khanay ka lapka parh jata hai, wo man hais al qaum deewani honay lagti hai.

Bano Qudsia Kay Novel, Raja Gidh Say Iqtabas
Shared by: Paras Sidiqqui