مرد

جو مرد اپنی کنگھی  پٹی میں لگا رہے نا اس کے پیچھے چل کر عورت خوار ہوتی ہے ۔ جو اپنی حجامت بنوا کر آئینہ  دیکھے نیا کپڑا پہن کر لڑکیوں والی گلی سے گزرے ، کلائی کی گھڑی بار بار دیکھے ، جوتے سے مٹی جھاڑے ، رومال سے منہ پونچھے ، حقہ کھینچے تو منہ داب داب کر دھواں چھوڑے ، ری ایسے مرد کو کمی رہی ہے کبھی عورتوں کی ؟ کیوں حرام موت مرنے لگی ہے ۔

اشفاق احمد حیرت کدہ صفحہ 10