ہاتھ، پاؤں

ایک عالم ، بادشاہ شاہجہاں کے ساتھ  کسی کامل کی خدمت میں حاضر ہوئے ۔ وہ کامل جس طرح پاؤں پھیلائے تھے ، پھیلائے رہے ۔ عالم ظاہر بین نے کہا ، اتنا بڑا سلطان حاضرِ خدمت ہوا اور آپ نے کچھ بھی اس کی تعظیم نہ کی ۔ فرمایا کہ میاں !  جب تک ہاتھ پھیلائے تھے پاؤں سمیٹے رہے  ۔ جب  ہاتھ سمیٹ لیے تو پاؤں خودبخود پھیل گئے ۔ 

 اشفاق احمد بابا صاحبا صفحہ 608