عزتِ نفس


جب تک میں اور آپ احترامِ آدمیت کا خیال نہیں رکھیں گے، اور اپنے لوگوں کو ، پاکستانیوں کو عزتِ نفس نہیں دیں گے روٹی کپڑا کچھ نہ دیں ان کی عزتِ نفس ان کو لوٹا دیں ۔ مثال کے طور پر آپ اپنے ڈرائیور کو سراج دین صاحب کہنا شروع کر دیں ۔ اور اپنے ملازم کے ساتھ "صاحب " کا لفظ لگا دیں ۔  جب تک یہ نہیں ہوگا اس وقت تک ہماری روح کے کام تو  بالکل رکے رہیں گے اور دنیا کے کام بھی پھنسے ہی رہیں گے ۔ 
اللہ تعالیٰ آپ کو آسانیاں عطا فرمائے اور آسانیاں تقسیم کرنے کا شرف عطا فرمائے آمین 

اشفاق احمد زاویہ 2  سائیکو اینالسس صفحہ 86