آرزو

بابا جی یہ آپ کے بیٹے صاحب شکوہ کناں ہیں کہ آپ انہیں وہ مراعات نہیں دیتے جو دی جانی چاہئیں ۔ اس پر بابا جی کہنے لگے میری آرزو ہے  کہ اسے انسان کی مدد اور سہارے کی عادت نہ رہے اور یہ بلا واسطہ طور پر خدا سے مدد طلب کرے اگر یہ انسان سے کوئی آرزو وابستہ کرے گا تو یہ خدا سے اتنا ہی دور ہوتا چلا جائے گا ۔

اشفاق احمد زاویہ 3 پتنگ باز سجناں  صفحہ 76